یاداشت

بہت ہی کھلبلی سی ہے
خیالوں میں سوالوں میں
یقین کے سبھ حوالوں میں
بہت ہی ٹوٹ کر بکھرا
ہلاکت خیز سالوں میں
میں منظور نظر کب تھا
ہجر کی بہکی چالوں میں
بہت کچھ جان پایا ہوں
تلاطم خیز ہالوں میں
کہو اب کچھ اسد تم بھی
بہا بیٹھے ہو یادوں کو
سمندر میں یا نلوں میں

Advertisements
یاداشت

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s