غربت

محفل یاراں میں بیٹھا سوچ میں میں پر گیا
جادو اِس دنیا کا کیسا غافلوں پے چل گیا
ہر روز کچھری میں ہے اک آگ مسلسل
تپش میں جس کی بندہ اے مظلوم جل گیا
تھر میں میسر نہیں پانی بھی اگرچہ
افسوس اِس نگر میں ، دودھ بہتا رہ گیا
رختے سفر غریب کی سوچوں سے دور ہے
امیرے شہر ہر قدم پے کوچ کرتا رہ گیا
غم ناک مصائب میں گھرا ہر قدم غریب
محفلے ارزاں میں غافل جھومتا ہی رہ گیا
نشیب و فراز دیکھ کر دنیا کے علی بھی
غفلت بھرے ہجوم کے سانچے میں ڈھل گیا

Advertisements
غربت

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s