حسرت

تیری جستجو میں میرے ہم نشیں
دعائیں میں کب سے صنم کر رہا ہوں
تیری حسرتوں کے دریچے میں آخر
میں اپنی کہانی بیان کر رہا ہوں
اذیت مصیبت ہزاروں سزائیں
جبر خود پے جاناں بہت کر رہا ہوں
افسوس تجھ کو خبر تک نا ہو گی
غزل نام تیرے میں یہ کر رہا ہوں
مانا کے تجھ سے ہوں کمتر میں لیکن
محبت کا پرچار میں کر رہا ہوں
خفا تو بہت ہوں مگر تجھ سے علی
نادانی پے تیری میں واہ کر رہا ہوں

Advertisements
حسرت

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s